بریکنگ نیوز

ورلڈ اکنامک فورم اور بلاول بھٹو زرداری کی دھوم

26994032_1545553938833620_7652170874346587327_n.jpg

تحریر: شہزاد شفیع

ورلڈ اکنامک فورم نے اِس سال اپنی سالانہ میٹنگ سوئٹرز لینڈ کے مقام ڈیوس میں منعقد کی۔ 23 جنوری سے 26 جنوری تک ڈیوس پوری دنیا کی توجہ کا مرکز رہا۔ سُپر پاور امریکہ کے صدر سے لے کر مختلف ممالک کے سربراہان اور اہم ترین شخصیات کی تقریریں اور پینل ڈسکشنز دنیا بھر کے اخبارات اور ٹی وی سکرینوں پر نمایاں رہیں۔ دنیا کو پُرامن بنانے اور عالمی اقتصادی ترقی کے حوالے سے اِن عالمی رہنماؤں کے مواقف پر بحث و مباحثے ہوتے رہے۔ کچھ رہنماؤں کے نقطہ نظر کو سراہا گیا تو کچھ پر تحفظات کا اظہار بھی کیا گیا۔

اس فورم میں دنیا بھر سے سیاسی اور ریاستی طاقتوں کو چلانے والے تھنک ٹینکس بھی مدعو تھے، جو وہاں ہونے والی ساری ایکٹیویٹیز کو آبزرو کر کے اپنے نوٹس بناتے رہے تاکہ وہ مستقل میں مختلف ممالک کی سیاسی، جغرافیائی اور اقتصادی صورت حال کے مطابق اپنی لابنگ کر سکیں۔ پاکستان کی طرف سے سرکاری طور پر وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی بھی وہاں موجود تھے، جنھوں نے موجودہ صورت حال پر وطنِ عزیر کا موقف پیش کیا۔

سنہ 2018ء کی ورلڈ اکنامک فورم کی سالانہ میٹنگ کے دوران عالمی رہنماؤں کی موجودگی میں ایک پاکستانی نوجوان لیڈر کا مدبرانہ اور دو ٹوک نقطہ نظر سب سے زیادہ سراہا گیا۔ مسحور کن شخصیت کے مالک یہ نوجوان لیڈر دنیا بھر کے میڈیا، تھنک ٹینکس اور عالمی تجزیہ نگاروں کے محور رہے۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس نوجوان رہنما نے پاکستان کے دائمی دشمن ملک بھارت سے سخت گیر موقف رکھنے والی قوتوں کے سخت سوالات کے جوابات بھی حد سے زیادہ تحمل مزاجی اور حاضر دماغی سے انتہائی مدلل انداز میں دیئے۔ اس دانشمندانہ موقف نے بھارت میں رہنے والوں کو بھی خوشگوار حیرت میں مبتلا کر دیا ہے۔ یہ نوجوان لیڈر کوئی اور نہیں بلکہ وطن عزیز کی سیاسی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری ہیں۔

پاکستان کے پہلے منتخب وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کے نواسے، سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو اور سابق صدر پاکستان آصف علی زرداری کے لخت جگر بلاول بھٹو زرداری نے ورلڈ اکنامک فورم کی سالانہ میٹنگ کے دوران دنیا بھر کے تجزیہ نگاروں، عالمی مبصرین اور تھنک ٹینکس کو اپنے تدبر اور دانش مندی کے واضح انداز سے مکمل طور پر سحر زدہ رکھا۔

بلاول بھٹو زرداری جب “جعلی خبروں اور اصل سیاست” کے عنوان سے مباحثے میں شریک ہوئے تو پروگرام کی میزبان نے ان کا تعارف انتہائی گرم جوشی سے کرایا اور تعارف میں محترمہ بینظیر بھٹو کا حوالہ بھی دیا۔ یہ لمحہ بلاول بھٹو زرداری کے لیے یقینی طور پر قابل فخر ہو گا، جب اُن کی شہید والدہ کا نام سُنتے ہی حال میں موجود حاضرین نے ان کو زبردست خراج تحسین پیش کیا۔ بلاول بھٹو زرداری نے جب زیر بحث موضوع پر اپنا نقطہ نظر پیش کیا تو سب نے نہ صرف بہت زیادہ داد دی بلکہ ان کی تجاویز کو قابل عمل بھی قرار دیا۔

بلاول بھٹو زرداری نے ورلڈ اکنامک فورم کی سالانہ میٹنگ کے دوران میڈیائی پروپیگنڈے سے لے کر سیاست، خارجہ پالیسی، اکانومی، دہشت گردی، عام آدمی کے معیار زندگی کو بہتر بنانے اور دنیا کو محفوظ بنانے کے لیے اپنی ٹھوس تجاویز دیں۔ اس کے علاوہ انھوں نے دنیا کو گلوبل ویلیج بنانے، مختلف ممالک کے لوگوں میں ہم آہنگی پیدا کرنے اور دنیا کو بہتر جگہ بنانے کے حوالے سے انتہائی مدلل گفتگو کی۔ فورم میں شریک ہر شخص بلاول بھٹو زرداری کی گفتگو سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکا۔ ورلڈ اکنامک فورم کے صدر نے بلاول بھٹو زرداری کی قابلیت اور سیاسی تَدَبُّر کی بھرپور تعریف کی۔

بلاول بھٹو زرداری نے جہاں ورلڈ اکنامک فورم میں پاکستان کی بھرپور نمائندگی کی، وہاں ہمسایہ ملک بھارت کی اہمیت کو سمجھتے ہوئے بھارت کے سب سے بڑے ٹی وی چینل کو انٹرویو بھی دیا، جس میں انہوں نے پاک بھارت تعلقات اور مسائل پر ایسی قابل عمل اور باکمال باتیں کیں کہ بارڈر کے دونوں اطراف عوامی اور صحافتی سطح پر انھیں بھرپور پذیرائی ملی۔

بلاول بھٹو زرداری نے ورلڈ اکنامک فورم کے ذریعے وطن عزیز کا موقف وزیراعظم پاکستان کی نسبت کئی درجے بہتر انداز میں پیش کیا۔ راقم یہ کہنے میں اپنے آپ کو حق بجانب سمجھتا ہے کہ بدقسمتی سے پاکستانی اسٹیبلشمنٹ پچھلی چار دہائیوں سے پاکستان کی واحد سیاسی پارٹی یعنی پاکستان پیپلز پارٹی کے مخالف جس طبقے کو اپنا نمائندہ اور لیڈر بنا کر پیش کرتی آ رہی ہے وہ آج تک کبھی بھی عالمی حوالے سے ملک کا دفاع نہیں کر سکے اور وہ جن عوامی شخصیات کو وہ پچھلے چالیس سال سے اپنے لیے ناقابل قبول سمجھتے ہوئے ختم کرتے چلے آ رہے ہیں، ان کی تیسری نسل بھی اپنے نانا، والدہ اور والد کی طرح ملک کی سرحدوں کے دفاع اور عوام کی فلاح و بہبود کے لیے اندرون ملک اور دنیا کے ہر بڑے فورم پر بھرپور مقدمہ لڑتے چلے آ رہے ہیں۔ راقم اگر یہ کہے کہ سال 2018ء کی ورلڈ اکنامک فورم کی سالانہ میٹنگ ایک ون مین شو تھا، اور یہ ون مین کوئی نہیں بلکہ بلاول بھٹو زرداری تھا، تو بالکل بے جا نہ ہو گا۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ