بریکنگ نیوز

عاصمہ جہانگیر آپکا شکریہ!

6.png

تحریر: شہزاد شفیع

آپ کا اس دنیا میں آنے کے لیئے شکریہ

لفظ عورت کو جلا بخشنے کے لیئے شکریہ

11 فروری 2018 کو اچانک انکی وفات کی خبر ہوئی تو دل و دماغ ہل سا گیا وہ کیوں چلی گئیں؟

لیکن ساتھ ہی یہ بھی علم تھا کہ یہ جانا تو سب کو ہی ہوتا ہے ایک دن اور عاصمہ جہانگیر بھی چلی گئیں لیکن اپنے حصے کا فرض بہترین انداز میں ادا کرکے۔

آج انکی نماز جنازہ ادا کرکے انکو سپرد خاک کرگیا اور اب وہ ہمیں تاریخ میں ایک رول ماڈل کے طور پر زندہ رہتی نظر آئیں گی۔

11 فروری سے لیکر 13 فروری تک یہی سوچتا رہا کہ عاصمہ جہانگیر جیسی قدآور شخصیت پر کیا لکھا جائے جب دنیا بھر کے بڑے بڑے ادیب, کلاء, لکھاری, انسانی حقوق کے لیئے جدوجہد کرنے والوں سے عالمی لیڈرشپ تک انکے لیئے بہت کچھ لکھ اور کہہ رہی ہوگی ایسے میں اس معاشرے کے ادنی اور بے ضرر آدمی کا لکھنا بے معنی ہوگا۔

لیکن جب انکا تاریخی جنازہ دیکھا تو یہ اپنے اوپر ذمہ ہوگیا کہ اپنی طرف سے شکریہ کہنے کا فرض ضرور ادا کروں جس نے عورت کے جنس کو جلا بخشی ہے۔

کیا شان تھی اسکی جنازے تھی, اپنے گھر سے لیکر قذافی اسٹیڈیم تک خواتین کے حصار میں مارچ کرتے ہوئے انکے جسد خاکی نے آنکھیں نم کردیں, بے جان عاصمہ جہانگیر کا جسد خاکی تب بھی ایک تحریک کی رہبری کر رہا تھا, کمال کا پراعتماد جنازہ تھا, مرد و زن انکے ساتھ انتہائی احترام و عقیدت سے چل رہے تھے اور انہیں پرتپاک انداز میں الوداع کر رہے تھے۔

جس معاشرے میں ہم نے جنم لیا, پلے بڑھے اور رہ رہے ہیں وہاں عورت ذات کا تصور اس قدر دب چکا ہے کہ اسکے احساسات سے لیکر اسکی صلاحیت, اسکی آزادی اور اسکا وجود تک مرد کے رحم و کرم پر ہے, پیدا ہونے سے لیکر مرنے تک کے عرصے کے درمیان اسے اپنی سانسیں بچا کر رکھنے کی جنگ لڑنی ہوتی ہے ,جہاں عورت کو گھر کے باہر غیر محفوظ بنا دیا جاتا ہے, جہاں عورت کے گھر سے باہر کام کرنے پر پابندی ہوتی ہے, جہاں عورت کی حکمرانی کو تسلیم نہیں کیا, وہاں پر عاصمہ جہانگیر کا پیدا ہونا یقیناً بہت بڑی انہونی ہوگی۔

عاصمہ جہانگیر نے پیدا ہونے سے لیکر اپنی آخری سانس تک ایک آزاد عورت کے طور پر اس گھٹن زدہ معاشرے میں لڑ کر اپنی مرضی سے جیا اور ٹھوک بجا کر جیا, اور ایسا جیا کہ خود کو طرم خان سمجھنے والے اس معمولی خدوخال کی خاتون کا سامنا کرنے کی جرات نہ کر پاتے, انکی زندگی میں آمریتیں اور جمہوریت آتی جاتی رہیں لیکن وہ اپنے موقف پر ڈٹی رہی جہاں آمریت کا ڈٹ کر مقابلہ کیا تو وہیں پر جمہوریت میں مجود حکمرانوں کی خامیوں پر بھی آواز بلند کرتی رہیں, کئی تحریکوں کو چلایا, فوج پولیس, ادرے کسی کے ڈنڈے اور ہتھیار اس خاتون کو اپنے موقف سے پیچھے ہٹنے پر مجبور نہ کر سکے, انہوں نے مردانہ معاشرے میں بے سہارا خواتین سے لیکر اس معاشرے کے ان مردوں کی بھی جنگ لڑی جنھیں کوئی راستہ دکھائی نہ دیتا تھا۔

اس عورت نے دنیا بھر میں ہر پسے ہوئے طبقے کی آواز اٹھائی اور اسکا مقدمہ لڑا, بلوچستان سے لیکر فلسطین تک وہ ہر گرنے والی بے گناہ لاش اور گمشدہ انسانوں کے حق میں آواز اٹھاتی رہی۔

اس پاداش میں کبھی انہیں غدار وطن کہا گیا تو کبھی اسلام کے دائرے سے خارج کیا گیا لیکن انہوں نے اس کی کبھی پرواہ نہیں کی,ایک عورت ایسا بھلا کر سکتی ہے کیا اس معاشرے میں واقعی عجیب سا محسوس ہوتا تھا, عاصمہ جہانگیر صاحبہ سے سیاسی حوالے سے کئی جگہوں پر اختلاف تھا لیکن اس کے باوجود ہمیشہ انکی عزت رہی کیونکہ ایک عورت ہونے کے ناطے وہ مردوں کے درمیان جس قد کاٹھ کے ساتھ کھڑی تھیں وہ بلا شبہ قابل رشک تھا۔

آج جب وہ اس دنیا میں نہیں ہیں تو اندازہ ہوا ہے کہ وہ ہماری سوچوں سے بھی زیادہ قیمتی تھی, اسکی جاندار تصاویر ہمیشہ غاصبوں کے تخت و تاراج ہلاتی رہے گی, عاصمہ جہانگیر کی ایک ایک تصویر گواہی دیتی ہے اسکے بھرپور ہونے کی۔

آج اسکی بیٹیاں مردوں کے ساتھ اسکے جنازے کے آگے تھیں اور اسپیکر پر آنے والے شرکاء کو ڈسپلن کا مظاہرہ کرنے کی تلقین کر رہی تھیں, عجیب منظر تھا عاصمہ کی رخصتی کا کہ ایک طرف چار دیواری کے اندر پیدا ہونے سے لیکر مرنے والی عورت یاد آرہی تھی دوسری عاصمہ جہانگیر کا جسد خاکی جس کے گرد کھڑے مرد و زن اسے اسکی جدوجہد پر خراج عقیدت پیش کر رہے تھے۔

ایسے میں انکا شکریہ تو بنتا ہے کہ انہوں نے راستہ دکھایا کہ عورت چاہے تو بے نظیر و عاصمہ جہانگیر بن سکتی ہے بس اس کے لیئے تھوڑے سے حوصلے اور ہمت کی ضرورت ہے اور وہ وقت دور نہیں جب بیٹیاں باپ اور بھائیوں کے لیئے بوجھ نہیں ہوں گی بلکہ عاصمہ جہانگیر ہوں گی۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ