بریکنگ نیوز

وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان کے نام ایک تحریر

184388_9906635_updates.jpg

بااختیار وزیر اعلیٰ ایک نظر ادھر بھی۔

تحریر : عمران اللہ مشعل۔

جب سے گورننس آرڈر 2018 آئ ہے حکومتی ترجمان اور حکومتی وزرا اس بات کی رٹ لگا تے تھکتے نہیں ہے کہ وزیر اعلیٰ اب بااختیار ہوگیا ہے اور گلگت بلتستان کو دیگر صوبوں کے برابر حثیت مل گئ ہے۔
اس میں کتنی صداقت ہے یہ تو آنے والا وقت بتائے گا اور اس سے ہمیں کوئ سرکار نہیں وزیر اعلیٰ کو کتنا اختیار ملتا ہے اور صوبوں کی برابر کتنی حثیت ملتی ہے کیونکہ پھر بھی ہم آئینی طور پر پاکستان کا حصہ نہیں بن سکتے ہے یہ خطہ بین الاقوامی متنازعہ علاقہ ہے اور حکومت پاکستان نے بھی آج تک اپنی ضرورت تک اقتدار اور اختیار دیا ہے۔

اب موجودہ باا ختیار وزیر اعلیٰ کی خدمت میں کچھ گزارشات عرض ہے مجھے نہیں پتہ اس معاملے میں بااختیار وزیر اعلیٰ کو کتنا اختیار حاصل ہے۔

دیامر بھاشہ ڈیم جو پاکستان کی اس وقت سب سے میگا پروجیکٹ ہے اور ملکی ترقی اور توانائ کی موجودہ کمی اور ضروریات پوری کرنے کے لیے بہت ہی اہم سنگ میل ہے لیکن اب تک وفاقی حکومت کی جانب سے کئے بار افتتاح اور کچھ عارضی اقدامات تک محدود رہی ہے اگر یہی سلسلہ جاری رہا تو پھر یہ بھی مستقبل کی کالا باغ ڈیم بن جائےگی۔

اب تک زمینوں کی خریداری کی مد میں جتنی پیمنٹس ہوئ ہے اس سے زیادہ کرپشن بھی ہوئ ہے جو کہ ریکارڈ پے ہے اور غریب اور مظلوم عوام کی زمینوں کو کوڑیوں کی دام خریدا گیا ہے لیکن عوام نے وسیع تر ملکی مفاد میں قربانی دی اور کسی قسم کے رکاوٹ نہیں بنے۔

دیامر ڈیم کی مرکز چلاس ہے اور چلاس 75 فیصد حصہ زیر آب آئے گی چلاس میں حکومت کی طرف فی کنال زمین 13 لاکھ دیا گیا ہے جبکہ اس وقت چلاس میں 40 لاکھ سے زائد فی کنال کی ریٹ ہے اب 13 لاکھ میں لوگ کیا خریدینگے؟۔

اس کے علاوہ حکومت اور واپڈ کی وعدے اور معاہدے کے مطابق فی گھرانے کو ایک کنال مفت پلاٹ مفت دیا جانا تھا معاوضوں کی ادائیگی کے 5 سال بعد بھی اس پر کچھ بھی پیشرفت نہیں ہوا ہے۔

2007 میں پہلی بار متاثرین کی حتمی فہرست بنائ گئ تھی جو ابھی تک وہی فہرست ہے تیرہ سال تک جتنی آبادی بڑھ گئ ہے اسکا اندراج آج تک نہیں ہوئ ہے جو کہ سراسر ناانصافی اور ظلم ہے۔

اس کے علاہ معاوضوں کی ادائیگی کے فورا بعد متاثرین کے لیے ماڈل ویلجیزز بناکر دوبارہ آبادکاری کرنی تھی اس پر بھی پانچ سالوں میں ابھی تک کام صفر ہے ایک بھی ماڈل ویلجز کا قیام عمل میں نہیں لایا گیا ہے۔

واپڈا نے علاقے کہ تعمیر و ترقی کے لیے اپنی فنڈز سے رابطہ سڑکیں سکولز اور کالجزز بنانا تھی لیکن وہ کام بھی ابھی تک مکمل نہیں ہوا ہے
کچھ رابطہ سڑکیں بنائ گئ تاہم وہاں بھی ٹھیکے میرٹ کیخلاف بغیر کسی ٹیندر کے دیا گیا اور ناقص میٹریل کا استعمال ہوا ہے اور کام نہ ہونے کی برابر ہے۔

واپڈ اور انتظامیہ دونوں ایک دوسرے پر زمہ داری ڈال کر خود کو بری زمہ قرار دے رہے ہیں اور مقامی کمیونٹی کے ساتھ مل کر کام کرنے کی بجائے کمیونٹی کو آپس میں لڑا کے” لڑاؤ اور حکومت کرو کی پالیسی پر گامزن ہے“۔
متاثرین میں اس صورتحال کیوجہ سے بہت زیاد تشویش پائ جاتی ہے اور یہ تشویش کسی بھی وقت ڈیم نامنظور تحریک میں تبدیل ہوسکتی ہے۔

اسلیے وزیر اعلیٰ اپنے اختیارات کا استعمال کرکے واپڈا حکام کو باور کرائے وہ ماڈل ویلجز پر جتنا جلدی ہوسکے کام شروع کریں اور مثاترین کو مفت ایک کنال زمین کی فراہمی یقینی بنائے زمین دستاب نہ ہونے کی صورت میں موجودہ مارکیٹ کی ریٹ پر فی کنال کی حساب سے معاوضہ ادا کیا جائے تاکہ متاثرین اپنی آبادکاری کا بندوست کریں۔

جو قبائل کے درمیان متنازعہ زمین ہے اس کے لیے چیف جسٹس گلگت بلتستان ہائ کورٹ جید علما کرام اور سابق مقامی بیوروکریٹس جو تمام تر عصبیت سے پاک ہو پر مشتمل قومی کمیشن بنا کر تمام زمینوں کی بروقت منصفانہ تقسیم عمل میں لایا جائے ورنہ کل کو یہی تنازعہ قبائل میں خون ریزی کا باعث بنے گی۔

بااختیار وزیراعلیٰ کو بھی یہ سب معاملات زاتی طور پر پتہ ہے تاہم انکی ابھی تک خاموشی بھی معنی خیز ہے اب اختیارات کا استعال کرنا ہوگا ورنہ کل کو واپڈا کی تمام ناکامیوں کا بوجھ وزیراعلیٰ کی گلے پڑے جائے گی۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ