بریکنگ نیوز

کیپٹن صفدر دین دار آدمی ہیں ، نیب پراسیکیوٹر ، احتساب عدالت میں سماعت کا احوال

Panama-JIT-6th-Meeting-Pkg-Isb-15-05-676x480.jpg

اسلام آباد (خصوصی رپورٹ) احتساب عدالت میں نیب پراسیکیوٹر نے حتمی دلائل مکمل کر لیے ، نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ شواہد سے ثابت کیا لندن فلیٹ نواز شریف کے ہیں،منی ٹریل سے متعلق ملزمان کا موقف غلط ثابت ہوا نو از شریف نے اپنے نہیں سب جائیدادیں بچوں کے نام بنائیں، سابق وزیراعظم اور بچوں کے بیانات میں تضاد ہے، نوازشریف کے لندن فلیٹس کے اصل مالک ہونے کے براہ راست شواہد عدالت میں پیش کردئیے ہیں ملزمان صفائی میں کچھ پیش نہ کرسکے نیب پراسیکیوٹر نے حتمی دلائل میں نواز شریف کے قوم اور قومی اسمبلی سے خطاب کے جملے پڑھ کر سنائے، ان میں قطری خط کا کوئی ذکر نہیں نوازشریف نے اپنے خطاب میں کہا تھا کہ یہ ہیں وہ ذرائع جن سے لندن فلیٹس خریدے گئے ، عدالت میں کوئی ذرائع پیش نہیں کیے گئے ،عدالت میں نوازشریف نے کہا کہ حسن جانے، حسین جانے اور ان کا کام جانے ، حسین نواز نے کہا الحمد اللہ فلیٹس ہمارے ہیں، نو از شریف نے اپنے نہیں سب جائیدادیں بچوں کے نام بنائیں، سابق وزیراعظم اور بچوں کے بیانات میں تضاد ہے، نوازشریف کے لندن فلیٹس کے اصل مالک ہونے کے براہ راست شواہد عدالت میں پیش کردئیے ہیں ملزمان صفائی میں کچھ پیش نہ کرسکے کیس کی سماعت منگل 12جون تک ملتوی کردی گئی آئندہ سماعت پر نواز شریف کے وکیل حتمی دلائل دیں گے جبکہ 11جون کو العزیزیہ ریفرنس کی سماعت ہوگی جس میں وکیل صفائی واجد ضیا پر جرح کریں گے۔ جمعہ کو احتساب عدالت میں سابق وزیراعظم نواز شریف مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر کے خلا ف ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت ہوئی۔ نواز شریف اور کیپٹن (ر) صفدر عدالت میں پیش ہوئے ۔ نیب پراسیکیوٹر سردار مظفر نے ایون فیلڈ ریفرنس میں حتمی دلائل چار روز بعد مکمل کئے۔ نیب پراسیکیوٹر نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ نواز شریف نے اپنے نہیں سب جائیدادیں بچوں کے نام بنائیں، سابق وزیراعظم اور بچوں کے بیانات میں تضاد ہے، صفائی میں کچھ پیش نہ کرسکے۔ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ نوازشریف نے قوم سے خطاب میں کہا تھا کہ کرپشن کے پیسے سے جائیداد بنانے والا کبھی اپنے نام پر نہیں رکھتا اسی لیے نواز شریف نے بھی سارے اثاثے بچوں کے نام بنائے۔ یہی ہمارا کیس ہے۔ نوازشریف کے لندن فلیٹس کے اصل مالک ہونے کے براہ راست شواہد پیش کردئیے ہیں۔ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ منی ٹریل سے متعلق ملزمان کا موقف بھی غلط ثابت ہوا ہے۔ استغاثہ نے اپنی زمہ داری پوری کردی، اب بار ثبوت ملزمان پر ہے۔ نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ ایون فیلڈ اپارٹمنٹس پر 1999 میں بھی ملزمان کا قبضہ تھا۔ کوئین بینچ لندن کا 1999کا فیصلہ تسلیم شدہ ہے التوفیق کیس میں پارک لین اپارٹمنٹس کو اٹیچ کیا گیا۔ کوئین بینچ کے فیصلے سے بھی ثابت ہوتا ہے کہ فلیٹس ملزمان کی ملکیت اور تحویل میں تھے۔ نیب پراسیکیوٹر نے نواز شریف کے قوم اور قومی اسمبلی سے خطاب کے جملے پڑھ کر سنائے جس میں قطری خط کا کوئی ذکر نہیں۔ نوازشریف نے کہا کہ یہ ہیں وہ ذرائع جن سے لندن فلیٹس خریدے گئے لیکن عدالت میں کوئی ذرائع پیش نہیں کیے گئے۔ عدالت میں نوازشریف نے کہا کہ حسن جانے، حسین جانے اور ان کا کام جانے۔ جبکہ حسین نواز نے کہا الحمد اللہ فلیٹس ہمارے ہیں۔ ملزمان طارق شفیع کو بھی بطور گواہ پیش کرسکتے تھے لیکن پیش نہیں کیا ، ملزمان یہ ثابت نہیں کرسکے کہ رابرٹ ریڈلے ماہر نہیں۔ تفصیلی دلائل دیتے ہوئے نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ ایون فیلڈ ریفرنس شواہد سے ثابت کیا لندن فلیٹ نواز شریف کے ہیں، منی ٹریل سے متعلق ملزموں کا موقف درست ثابت نہیں ہوا،قطری والا دفاع بھی ان کا اپنا ہے جسے غلط ثابت کر چکے ہیں، ریکارڈ پر نہیں کہ اختر ریاض راجہ یا واجد ضیا کی نوازشریف سے دشمنی ہو اور ان دونوں کی رشتہ ہونا مسئلہ نہیں، ثابت کرچکے پراپرٹی 1993سے ان کی ہے، یہ لندن فلیٹ کی ملکیت سے انکاری بھی نہیں، فرد جرم کے مطابق ہم نے اپنی ذمہ داری پوری کی ہے،بار ثبوت ان پر تھا کہ وہ وضاحت کرتے مگر وہ کوئی ثبوت نہ دے سکے،مریم نواز نے ٹرسٹ ڈیڈ اصل بتا کر جے آئی ٹی میں دی، ریڈلے کی رپورٹ میں اسے خود ساختہ اور جعلی قرار دیا گیا جبکہ ملزمان نے عدالت میں کوئی ٹرسٹ ڈیڈ نہیں دی، نواز شریف نے بطور وزیراعظم قوم سے خطاب میں کہا تھا کہ کرپشن سے جائیداد بنانے والا جائیداد اپنے نام پر نہیں رکھتا،ان کا یہ بیان بطور ثبوت استغاثہ کی طرف سے عدالت میں پیش کیا گیا، ہمارا کیس بھی یہی ہے نواز شریف نے اپنے بچوں کے نام جائیداد بنائی، پبلک آفس ہولڈر کرپشن کے پیسے سے جائیداد بناتا ہے تو اپنے نام پر نہیں رکھتا، یلبری فونٹ 2007سے پہلے کمرشل استعمال کے لیے دستیاب نہیں تھا اور ریڈلے رپورٹ کے مطابق دستاویزات میں جعلسازی پائی گئی ہے،سردار مظفر عباسی نے کہا کہ ریڈلے کے بیان اور رپورٹ کے بعد ملزمان نے کسی ایکسپرٹ کو بطور گواہ پیش نہیں کیا،نوازشریف نے قوم سے خطاب میں کہا کہ کرپشن کے پیسے سے جائیداد بنانے والا کبھی اپنے نام ہر نہیں رکھتا، نوازشریف کے قوم سے خطاب کو بطور ثبوت استغاثہ کی طرف سے عدالت میں پیش کیا گیا، ہمارا کیس بھی یہی ہے کہ نوازشریف نے اپنے بچوں کے نام جائیداد بنائی،پبلک آفس ہولڈر کرپشن کے پیسے سے جائیداد بناتا ہے تو اپنے نام ہر نہیں رکھتا، نوازشریف کے لندن فلیٹس کے اصل مالک ہونے کے براہ راست شواہد پیش کردئیے ہیں، دستاویز کو دستاویز کے ذریعہ مسترد کیا جاتا ہے ،ایون فیلڈ پرانیس سو ننانوے میں بھی ان کا قبضہ تھا ،انہوں نے سیٹلمنٹ بھی ثابت نئیں کی،جب تک کوئی دستاویزی شواہد یا زبانی شرائط نہیں دیں گے ،ان کی بات نہیں سنی جا سکتی،اپنے دلائل میں نے دستاویزات کی بنیاد پر دیے ، ہمارا کیس میں نئیں کہ براہ راست دیں، کرپشن کا ملبہ کوئی پاگل نہیں کہ اپنے پاس رکھے ،کرپشن کا ملبہ بیوی بچوں کے نام رکھا جاتا ہے، چوری کے پیسے سے کوئی شخص جائیداد بناتا ہے وہ کبھی بھی اپنے نام نئیں رکھتا، تقریر کے متن پر انہوں نے جرح نہیں کی، نواز شریف نے نومبر میں کہا کہ سعودی عرب میں لگائی گئی فیکٹری کی فروخت سے حاصل کردہ رقم سے حسن اور حسین نواز نے نیا کاروبار شروع کیا،اس تقریر میں بھی کہیں قطری کا ذکر نہیں،
اس تقریر اور ان کے موقف میں بھی فرق ہے،رابرٹ ریڈلے سے ملنا کون سا گناہ ہے،ہم اپنے گواہوں سے ملتے ہیں،آپ نے خود کہا تھا واجد کو سمجھا ئیں کیسے بیان دیتا ہے تاکہ گواہ ادھر ادھر نہ جائے اور عدالت کا وقت بچے،انہوں نے خود لندن پراپرٹیز تسلیم کیں اور چیف جسٹس کو کمیشن بنانے کی درخواست کی،نواز شریف کے پہلے خطاب میں کسی قطری کا ذکر نہیں،گلف سٹیل مل پہلی بار تقریر میں بتائی گئی،
یہ اپنی پہلی تقریر سے خود متضاد بات کرتے ہیں،ایک چیز مشترک ہے، کہ سب مانتے ہیں فلیٹس ہمارے ہیں،ذرائع پر سب کا تضاد ہے ،قومی اسمبلی میں کچھ اور بتایا، سپریم کورٹ میں نئی کہانی سنائی،حسین نواز نے انٹرویو میں کہا کہ لندن فلیٹس ہمارے ہیں اور آف شور کمپنی تسلیم کی،عوام میں موقف مختلف تھا، سپریم کورٹ میں مختلف پیش کیا گیا ،ملزمان کو نیب طلبی کے سمن کی تعمیل ہوئی ، ملزمان نے وکیل کے ذریعے سمن کا جواب بھی دیا ، استغاثہ نے اپنا کیس شواہد سے ثابت کیا ہے ، رابرٹ ریڈلے کے بیان کے وقت بطور پراسیکوشن میری موجودگی ضروری تھی ، انہیں جب معلوم ہوا کہ عدالت کا حکم ہے تو انہیں اعتراض واپس لینا پڑا ، استغاثہ اپنے گواہان سے ملتا بھی ہے ، اگر یہ گواہ پیش کرتے تو کیا یہ گواہ سے نہ ملتے ، کیپٹن ر صفدر صاحب کو انہوں نے خود بیان لکھوایا،ایک حکومت سے دوسری حکومت کو آنے والے شواہد میں ٹمپرنگ کا شبہ تک نہیں ہوتا ،فلیٹس سے متعلق 1993کی دستاویز ہے اس کو کیسے مسترد کریں گے، فلیٹس آف شور کمپنیوں کے ذریعے بنائے گئے ، دستاویزات پر جو کٹنگ ہے وہ نام وغیرہ کاٹ دیتے ہیں ، طارق شفیع کا استغاثہ نے شامل تفتیش ہونے کو کہا ، ملزمان نے بھی طارق شفیع کو پیش نہیں کیا ، یہ طارق شفیع کو لے آتے ، اس کا مطلب ہے طارق شفیع کا موقف درست نہیں تھا، اس عدالت میں ثابت کرنا پڑنا تھا اس لئے طارق شفیع کو پیش نہیں کیا گیا ،کیپٹن ر صفدر تھوڑے سے دین دار بھی ہیں ، یہ خود ہی بیان لکھواتے رہے ہو سکتا ہے ملزم وہ بات نہ لکھواتے ، جب وکیل ملزم کا بیان لکھواتا ہے کیس ہمارا متاثر ہوتا ہے ، یہ ثابت نہیں کر سکے رابرٹ ریڈلے ماہر نہیں تھا ، رابرٹ ریڈلے نے پہلی بار پاکستانی عدالت میں پیش ہونا تھا ، حسین نواز نے انٹرویو میں کہا یہ پراپرٹی نواز شریف کی ہے کیوں کے میں بھی انکا ہوں ،اس سے اچھا سچ اور کیا ہو سکتا ہے ،
انہوں نے اس انداز میں سچ بولا ،مریم نواز نے انٹرویو میں کہا میری لندن اور پاکستان میں کوئی جائیداد نہیں ،مریم نواز نے کہا کہ میں اپنے والد کے زیر کفالت ہوں ، مریم نواز نے کہا کہ میرے بھائی کی بھی کوئی جائیداد نہیں نی، 2006 میں سٹل منٹ ہوا ہی کیا انہیں اپنا ہی معلوم نہیں تھا ،انکے اپنے موقف میں بھی تضاد ہے ،2016 میں جائیداد کو تسلیم کرتے ہیں مگر زرائع مختلف بتاتے ہیں ، انکے وکیل سپریم کورٹ میں یہ بیان سیاسی تھا ،انکے وکیل نے سپریم کورٹ میں کہا حسن اور حسین نواز 1993 سے لندن فلیٹس میں مقیم تھے کیوں وہ پڑھ رہے تھے ، ایسے کوئی مالک نہیں کرتا کہ وہ کہے آپ رہیں بل میں دوں گا ، ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت منگل تک ملتوی کر دی گئی ، نیب پراسیکیوٹر سردار مظفر کے دلائل مکمل ہو گئے ، پیر کو العزیزیہ اسٹیل مل ریفرنس کی سماعت ہو گی جس میں واجد ضیا پر جرح کی جائے گی۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ