بریکنگ نیوز

شنگھائی تعاون تنظیم : سیکیوریٹی، معیشت اورباہمی تعلق اہم ترجیعات

SCO1-e1523910835809.jpg

(خصوصی رپورٹ):۔ شنگھائی تعاون تنظیم گزشتہ کچھ سالوں کی جدو جہد سے ایک جامع علاقائی آرگنائیزیشن میں تبدیل ہو چکی ہے اور اس تنظیم کے اہم بنیادی عوامل اور ستونوں میں رکن ممالک کے مابین سیکیوریٹی، معیشت اور لوگوں کے مابین باہمی روابط کا فروغ ہے۔ شنگھائی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے مابین سیکیوریٹی تعاون ایک اہم پیش رفت ہے اور رکن ممالک سٹریٹیجک ہم آہنگی کے حوالے سے تین بنیادی عوامل بشمول دہشت گردی، علحیدگی پسندی اور انتہا پسندی کے حوالے سے اہم پیش رفت کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں ، واضح رہے کہ شنگھاہی تعاون تنظیم کا پہلا با ضابطہ اجلاس شنگھائی کنونشن کے نام سے 2001میں دہشت گردی، انتہاپسندی اور علحیدگی پسندی کے خاتمے کے حوالے سے منعقد ہوا جس میں ان تینوں بنیادی عوامل کے حوالے سے شریک ممالک نے دستخط کیئے اور گزشتہ سترہ سالوں میں جب سے شنگھاہی تعاون تنظیم کا قیام عمل میں آیا ہے رکن ممالک کے مابین ان تین بنیادی عوامل کے حوالے سے بہت سے معاہدات پر دستخط ہوچکے ہیں ، یوں شنگھاہی تعاون تنظیم کے رکن ممالک ان تینوں عوامل کے حوالے سے ایک جامع قانون سازی سے متعلق نظام تشکیل دے چکے ہیں جو ان بنیادی عوامل پر عمل درامد کے لیے ایک ٹھوس بنیاد فراہم کر تا ہے۔ اسی طرح سے شنگھاہی تعاون تنظیم کے رکن ممالک نے دہشت گردی کے خاتمے، انسدادِمنشیات، اسمگلنگ، منظم جرائم کی روک تھام کے لیے قانون سازی کو یقینی بنایا ہے اور اقوامِ متحدہ اور بینالاقوامی قانوں کی پاسداری کرتے ہوئے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے متحرک اور کلیدی کردار ادا کر رہے ہیں۔ شنگھاہی تعاون تنظیم نے بحثیت ایک آرگنائزیشن دہشت گردی اور انتہا پسندی کے دوہرے معیار کے خاتمے کے حوالے سے بھی مختلف سطع پر علاقائی مشقوں کا آغاز کیا ہے جس سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ شنگھاہی تعاون تنظیم علاقائی اسکیوریٹی اور سا لمیت کے حوالے سے کس قدر سنجیدہ کردار ادا کر رہی ہے۔ علاقائی اقتصادی تعاون کے فروغ کے حوالے سے شنگھاہی تعاون تنظیم نئے عوامل کو روشناس کروا رہی ہے اور اقتصادی تعمیرِ نو کے لیے اور اقتصادی گلو بلائزیشن کے لیے شنگھاہی تعاون تنظیم ایک کلیدی کردار کیہساتھ آگے بڑھ رہی ہے۔ شنگھاہی تعاون تنظیم کے رکن ممالک تجارتی رجعت پسندی اور اینٹی گلوبلائزیشن کے مخالف ہیں اور عالمی سطع پر عالمی تعاون کے فروغ کے حوالے سے کوششیں جاری رکھے ہوئے ہیں اور عالمی معیشت کی ترویج کے لیے اس تنظیم کے پلیٹ فارم سے کثیر الجہتی بین الاقوامی تجارتی میکنزیم کے قیام کے لیے مربوط کوشییں کی جا رہی ہیں ، دوسری جانب شنگھاہی تعاون تنظیم علاقائی اقتصادی تعاون کے فروغ کے لیے علقائی تجارت اور سرمایہ کاری کی ترویج کے حوالے سے تمام سہولتوں کو یقینی بنانے کے لیے کام کر رہی ہے اور ابنیادی ضروریاتِ زندگی کی نقل وحمل،سروسز اور ٹیکنالوجیز کے شعبوں اور مختلف ممالک سے مختلف اشیاء کی ترسیل کے حوالے سے سہولت کیساتھ انتظامات کو یقینی بنایا جا رہا ہے۔ یوں شنگھاہی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے مابین کثیر الجہتی تجارتی پروگرامز اور تعاون کے حوالے سے معاہدات کو یقینی بنایا گیا ہے تاکہ تمام رکن ممالک ایک دوسرے سے بھر پور استعفادہ حاصل کر سکیں اور اس ضمن میں ایکشن پلان برائے 2016-20پر عمل درامد یقینی بنائیں اور SCOڈیوویلپمنٹ اسٹرٹیجی برائے2025تک کامیابی سے بڑھ سکیں جو مقاصد کی ایک ایسی فہرست ہے جو ڈیوویلپمنٹ پراجیکٹس سے متعلق ہے، اسی طرح شنگھائی تعاون تنظیم کے ممالک کے مابین ثقافتی عوامل کے فروغ کے لیے ثقافتی طائفوں کا تبادلہ یقینی بنایا جاتا ہے، یوں سائنس ، صحت، ٹیکنالوجی، ثقافت، ٹوورازم، تعلیم اور ماحولیاتی بچائو کے حوالے سے بھی اہم عوامل پر تعاون اور مہارت سے استعفاہدہ کیا جا رہا ہے اس کے علاوہ میڈیکل کے شعبوں، مہلک بیماریوں سے بچائو کے حوالے سے تدابیر اور میڈیکل انشورنس کے امور پر تعاون جاری ہے۔ اسی طرح شنگھایہی رکن ممالک کے مابین حکومتی سطع پر2007میں ثقافتی شعبے میں باہم تبادلوں کے لیے ایک معاہدہ ہوا جس کے تحت رکن ممالک کے مابین لوگوں کی سطع پر باہمی وفود کے تبادلوں سے متعلق عوامل طے پائے۔ یوں رکن ممالک کے لوگوں کو ایک دوسرے کے کلچر کو سمجھنے اور ایک دوسرے سے استعفادہ حاصل کرنے کے بیشتر مواقعے میعسر آئیں ہیں ، اس طرح ثقافتی ہم آینگی کے حوالے سے بیشتر پروگرام شروع کیے گئے جن میں کلچر سال، لینگویج سال، سیاحت سال، آرٹ فیسٹول اور ابین الاقوامی ایکسپوز کا منعقد کیا جا نا شامل ہے۔ چین نے تمام رکن ممالک کئیے ساتھ قریبی تعلقات قائم کیئے ہوئے ہیں اس حوالے سے قازقستان روس اور چین کے مابین تعلیم کے فروغ کے حوالے سے جو پیش رفت اور تعاون جاری ہے اس امر سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ چین اپنے دوست اور شنگھائی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کیساتھ کس قدر خلوص اور سنجیدگی سے باہمی تعاون وک آگے بڑھا رہا ہے۔ سیاحت کے فروغ کے حوالے سے چین اور روس میں لوگوں کی سطع پر سیاحت کا بہترین عوامل دیکھینے میں آ رہے ہیں گزشتہ سال 2017میں چین سے سیاحت کے حوالیسے روس جانیوالے لوگوں کی تعداد میں چوبیس فیصد اضافہ ہوا ہے، اس طرح اس تاریخی سلک روڈ پر سفر کرنیوالے سیاح اپنی تاریخی عوامل اور ثقافتی اور قدرتی اثاثوں سے بھی روشناس ہوتے ہیں ، اس تناظر میں امید کی جا سکتی ہے کہ رواں ہفتے سے جاری مشرقی چین کے صوبے چنگڈائو میں ہونیوالیی شنگھاہی تعاون تنظیم کا اجلاس ایک رکن ممالک کے مابین سیکوریٹی، معیشت اور لوگوں کے مابین باہمی تعلقات کے فروغ اور استحکام کے حوالے سے ایک اہم سنگِ میل ثابت ہوگا اور رکن ممالک کے مابین باہمی تعاون اور اعتماد کے استحکام کا باعث بھی بنے گا اور علاقائی سیکوریٹی، سا لمیت اور ڈیوویلپمنٹ کو یقینی بنانے میں کارگر ثابت ہوگا۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ