بریکنگ نیوز

“روشن کہیں بہار کے امکاں ہوئے تو ہیں”

download-3.jpg

تحریر:- محمد قاسم بهٹہ

موسیلے براون امریکہ کی مشہور سیاستدان اور سفارتکار رہ چکی ہیں- انهیں امریکہ کی پہلی خاتون افریقن-امریکن سینٹر ہونے کا اعزاز حاصل ہے- وہ 1999 سے 2001 تک امریکہ کی نیوزی لینڈ میں سفیر بهی رہ چکی ہیں- ان کا کہا ہوا ایک جملہ عالمی سیاست میں اکثر دہرایا جاتا ہے- انهوں نے کہا تها ” بین الاقوامی تعلقات میں کوئی مستقل دوست اور کوئی مستقل دشمن نہیں بلکہ مستقل مفادات ہیں”- یعنی عالمی سیاست میں اگر کوئی مستقل چیز ہے تو وہ صرف مفادات ہیں- اس کے علاوہ نہ مستقل دوست ہیں اور نہ ہی دشمن- یہ حقیقت ہے کہ وقت کے ساتهہ انسان کی ضروریات اور مفادات بدلتے رہتے ہیں- کل کے دشمن آج کے دیرینہ دوست اور کل کے گہرے دوست آج ایک دوسرے کے گریباں چاک کرتے نظر آتے ہیں-
اگر موسیلے براون کے جملے کو امریکہ افغان( خصوصا افغان طالبان) کے تناظر میں دیکها جائے تو یہ بالکل سچ ثابت ہوتا ہے- امریکہ اب تک افغانستان میں جن کے خلاف برسرپیکار رہا وہی طالبان کبهی وائیٹ ہاوس کے مہمان خصوصی ہوا کرتے تهے اور انهی کے لئے وائیٹ ہاوس میں ریڈ کارپٹ بچها کرتے تهے- لیکن پهر وقت نے کروٹ بدلی- وہی طالبان جو کبهی امریکہ کے منظور نظر ہوا کرتے تهے وہ امریکہ کی سلامتی اور پائیدار امن کے لئے خطرہ بن گئے- 9/11 کے واقعے کے بعد امریکہ نے یہ بیانیہ جاری کیا کہ دنیا میں پائیدار امن کے حصول کے لئے طالبان کے خلاف کاروائیاں کی جائیں- امریکہ نے اپنے اتحادیوں کے ساتهہ مل کے افغانستان میں براہ راست مداخلت کی اور اپنی بهر پور قوت کے ساتهہ طالبان کے خلاف کاروائیاں شروع کر دیں- امریکہ کی شروع کی گئی اس “وار آن ٹیرر” میں جو کچهہ بهی ہوا میں اس کی تفصیل میں نہیں جاونگا- 17 سال سے جاری افغانستان میں جنگ کے سد باب کے لئے بالآخر عالمی قوتوں نے اس جنگ کو مذاکرات کے ذریعے حل کرنیکا فیصلہ کیا ہے- بقول فیض احمد فیض….

“روشن کہیں بہار کے امکاں ہوئے تو ہیں
گلشن میں چاک چند گریباں ہوئے تو ہیں”

اس سلسلے میں فریقین کے درمیان بہت سارے معاملات میں اتفاق رائے دیکهنے کو ملا- فریقین کے درمیان جاری ان مذاکرات میں جو مناظر دیکهنے کو ملے ماضی میں ان کا تصور بهی نہیں تها کیا جا سکتا- جو کل ایک دوسرے کے جانی دشمن تهے وہی آج اکٹهے کهانا کها رہے ہیں- اسی سلسلے میں مذاکرات کا اگلا دور رواں ماہ قطر میں ہو گا- امید واثق ہے کہ یہ مذاکرات کامیابی سے جاری رہیں گے اور مثبت پیش رفت دیکهنے کو ملے گی-
اس 17 سالہ جنگ میں امریکہ کا مقصد “امن قائم کرنا” تها یا اس کے مفادات کچهہ اور تهے- بہر حال امریکہ طالبان مذاکرات کے بعد ایک بات تو اقوام عالم پر بالکل واضح ہو گئی ہے کہ ” جنگ” کسی بهی مسئلے کا حل نہیں ہے- دنیا میں پائیدار امن تب ہی قائم ہو سکتا ہے جب تمام مسائل پر فریق بیٹهہ کر باہمی مشاورت سے مسائل کا حل تلاش کرینگے-
لیکن اچنبے کی بات یہ ہے کہ بهارت ان مذاکرات کی مسلسل مخالفت کر رہا ہے- بهارت جنوبی ایشیاء کا سب سے بڑا ملک ہے لیکن بهارت کے اپنے ہمسائیوں کے ساتهہ تعلقات قابل تعریف نہیں ہیں- بهارت کا مسلسل جارحانہ رویہ خطے میں پائیدار امن کی راہ میں رکاوٹ ہے- بهارت اور پاکستان کے تعلقات ہمیشہ ہی سرد مہری کا شکار رہے ہیں- پوری دنیا میں یورپ کی معاشی ترقی کی مثالیں دی جاتی ہیں- یورپ نے دو عالمی جنگیں لڑی جس کے نتیجے میں کروڑوں انسان لقمہء اجل بنے- پهر انهیں بهی اس بات کا احساس ہوا کہ “جنگ” کسی بهی مسئلے کا حل نہیں ہے- پهر انهوں نے بهی اپنے تمام مسائل کا حل بات چیت، باہمی رواداری اور شراکت داری کے ذریعے نکالا- یورپ دو عالمی جنگیں لڑنے کے بعد اور امریکہ افغان جنگ لڑنے کے بعد اس نتیجے پر ہی پہنچے ہیں کہ مسائل یا تنازعات کو با زور طاقت حل نہیں کیا جا سکتا- لہذا بهارت کو افغان جنگ کے خاتمے کے لیے شروع کیے گئے مذاکرات میں مثبت کردار ادا کرنا چاہیئے- خطے کا امن افغانستان کے امن پر منحصر ہے- اسے اس بات کو سمجهنا چاہیئے کہ افغان مسئلے کا حل مثبت اور کارآمد سیاسی اور سفارتی کوششوں میں ہی پوشیدہ ہے- بهارت کو اس بات کا بهی احساس کرنا چاہیئے کہ کشمیر سمیت کسی بهی مسئلے کا حل جنگ و جدل نہیں ہے- طاقت کے وحشیانہ استعمال سے ذہنوں میں ابهرنے والے آزادی کے جذبات کو نہیں دبایا جا سکتا- بلکہ مسائل کا تمام حل صرف اور صرف باہمی شرکت داری اور سفارتی کوششوں سے ہی ممکن ہے-

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ