بریکنگ نیوز

ذوالفقار علی بھٹو، سی آئی اے اور جنرل ضیاء الحق

C525FDD6-8BF0-45DF-9A63-70C7E1390085.jpeg

تحریر طاہر ملک

سی آئی اے کی حال ہی میں ذوالفقار علی بھٹو کی پھانسی سے متعلق جاری کی گئی اکتوبر1978 ء کی دستاویز کے مطابق جنرل ضیاء الحق کے اقتدار میں رہنے کا واحد جواز ذوالفقار علی بھٹو کو کیفرِ کردار تک پہنچانا تھا۔ امریکی حکومت کو یہ پیغام دیا گیا کہ جنرل ضیا کا اقتدار میں رہنا افواجِ پاکستان میں ان کی مقبولیت پر منحصر ہے۔

ڈان اخبار میں شائع شدہ سی آئی اے کی جائزہ رپورٹ کے مطابق اگر ذوالفقار علی بھٹو کو چھوڑ دیا گیا اور انجام سے ہمکنار نہ کیا گیا تو افوجِ پاکستان میں جنرل ضیاء الحق غیر مقبول ہو جائیں گے۔

کئی دہائیاں بیتنے کے بعد یہ رپورٹ پڑھ کر یہ احساس ہوا کہ بھٹو کو سی آئی اے اور جنرل ضیاء الحق مل کر بھی مار نہ سکے اور بھٹو تاریخ میں زندہ رہنے کو ترجیح دیتے ہوئے امر ہو گیا۔

احمد ندیم قاسمی کے بقول

مار ڈالے گا اُسے جرم کا احساس ندیم

قتل کر کے جسے مقتول پہ سبقت نہ ملی

اس نوعیت کی رپورٹ کا مقصد امریکی حکومت کی جانب سے جنرل ضیاء کو یہ پیغام بھی دینا تھا کہ یہ اُن کی بقا اور اقتدار میں رہنے کے لئے ضروری ہے کہ وہ ذوالفقار علی بھٹو کو راستے سے ہٹائیں۔ تیسری دنیا کے دیگر ممالک کی طرح سازش کا تانا بانا ایسے بُنا گیا کہ جب ذوالفقار علی بھٹو نے ایٹمی پروگرام کی بنیاد رکھی تو اس وقت ان کے قریبی رفقاء غلام مصطفےٰ کھر۔ خورشید حسن میر۔ حنیف رامے۔ جے اے رحیم وغیرہ کو ان سے دور کر دیا گیا۔

تو دوسری جانب مذہبی قوتوں کو نادیدہ اور خفیہ قوتوں کے اشارے سے نظامِ مصطفےٰ کے نام پر چلنے والی تحریک کے نام پر سڑکوں پر لایا گیا۔

ذوالفقار علی بھٹو اپنی سیاسی ٹیم سے دور ہوتے گئے-

اور ایف ایس ایف کے سربراہ مسعود محمود ۔ آئی ایس آئی کے سربراہ جنرل جیلانی اور چند دیگر جاگیر داروں کے زیرِ اثر غلط فیصلے کرنے لگے۔

ان تمام اسباب کے با وجود بھٹو اپنے دیگر سیاسی قائدین اور جماعتوں کے مقابلے میں مقبول ترین رہنما تھے۔

لہٰذا 5 جولائی1977ء کی شب افواجِ پاکستان کے سربراہ جنرل ضیاء الحق نے اقتدار پر شب خون مار کر عوام کو اِن کے حقِ حکمرانی سے محروم کر دیا۔

آگے چل کر اس سازش میں عدلیہ بھی اپنا بھر پور حصہ ڈالتی ہے اور پھر بھٹو کی سزائے موت کے فیصلے پر مہرِ تصدیق کرنے کیلئے فوجی حکمران کی جانب سے پنڈی جیل کا انتظام جیل پولیس پر عدم اعتماد کرتے ہوئے افواجِ پاکستان کے سپرد کر دیا گیا۔ جس کی نگرانی جنرل راحت لطیف کر رہے تھے اور جیل آفیسر کے فرائض کرنل رفیع سر انجام دے رہے تھے۔

اِن تمام تر واقعات کو بعد ازاں کرنل رفیع نے کتابی شکل میں تحریر کیا.

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ