بریکنگ نیوز

قومی اسمبلی میں 26 ویں ترمیم منظور

download-3.jpg

قومی اسمبلی میں 26 ویں ترمیم منظور کر لی گئی ہے. قوم کو مبارک ہو کہ پارلیمنٹ نے ایک دفعہ پھر اکٹھے ہوکر کثرت رائے سے بل کی منظوری دی ہے. اس ترمیم کے تحت فاٹا کے قومی اسمبلی کے ممبران کی تعداد 12 ہی ہے جبکہ صوبائی اسمبلی کے ممبران کی تعداد 16 سے بڑھا کر 24 کردی گئی ہے.
لیکن کتنے مزے کی بات ہے ان 26 ترامیم کو اٹھا کر دیکھ لیں کوئی ایک ترمیم بھی ایسی نہیں ہوگی جس سے عوام کو براہ راست فائدہ پہنچا ہو یا جس میں عوام کے کسی قسم کے مفاد یا حقوق کو مدِ نظر رکھا گیا ہو. آئین کے پہلے 40 آرٹیکلز عوام کے حقوق کی بات کرتے ہیں جس میں روٹی, کپڑا, مکان, علاج, گھر, تعلیم سمیت دیگر حقوق کی بات کی گئی ہے. آج تک کسی ممبر پارلیمنٹ کے منہ سے ان آرٹیکلز کا نام تک سنا ہے؟ انکو فکر ہے تو 18 ویں ترمیم کی کہ کہیں وہ ختم نہ کر دی جائے. انکو فکر ہے تو اس بات کی کہ فاٹا سے ممبران کی تعداد بڑھا دی جائے اسکا فائدہ بھی بلواسطہ یا بلاواسطہ سیاسی جماعتوں کو ہی جائے گا کیونکہ اسکے بعد انکی سیاست کا میدان مزید وسیع ہوجائے گا. انکو فکر ہے کہ کہیں اس نظام کو کوئی ہاتھ نہ لگا دے کہ انکی روزی روٹی بند ہوجائے گی.
یہ تمام 26 ترامیم ہمارے منہ پر ایک تھپڑ ہیں, اور اسکو خالی تھپڑ نہ سمجھ لیجیے گا اس میں نفرت حقارت اور طنز کی آمیزش بھی شامل ہے کہ تم جو چاہو کرلو لیکن ہوگا وہی جو ہم چاہیں گے. پارلیمنٹ میں اول تو کوئی آئے گا نہیں اور اگر کوئی آگیا تو بات نہیں کرنے دی جائے گی. ہاں صرف ایک شرط ہے ایسی ترامیم لے آو جس سے مراعات میں اضافہ ہوتا ہو, اٹھارویں ترمیم جیسی جگت مارنی ہو, یا 26ویں ترمیم کے نام پر عوام کو بدھو بنانا ہو.
پاکستان کے پارلیمانی نظام کے حامی مجھے ایک ترمیم یا ایک بحث ایسی لاکر دکھا دیں جس میں دیانت داری اور یکسوئی سے صرف عوام کے ان پہلے 40 آرٹیکلز پر بحث کی گئی ہو یا اس حوالے سے کوئی ترمیم کی گئی ہو. الٹا لٹکنے تک نوبت آجائے گی لیکن ایسا ہو نہیں سکے گا.
پارلیمانی نظام پاکستان کا فلاپ ترین گھٹیا اور بے ہودہ مذاق ہے. یہ مسلسل طنز اور بیہودہ جگتوں پر مبنی وہ سیریز ہے جو صرف عوام کو انٹرٹینمنٹ کے نام پر نشانہ بنانے کے لیئے شروع کی جاتی ہے.
مجھے سمجھ نہیں آتی یہ نظام بانجھ ہے جہاں سے کوئی غریب پڑھا لکھا متوسط طبقے سے تعلق رکھنے والا بندہ اوپر نہیں آسکتا یا اس نظام کی خاصیت ہی یہ ہے کہ متوسط طبقے کو حکومتی امور سے دور رکھا جائے اور انہیں صرف چارہ چرنے کے لیئے لگایا جائے.
پارلیمانی نظام ختم ہوا تو حلقوں کی سیاست, ہارس ٹریڈنگ, بلیک میلنگ, غنڈہ گردی, اقربا پروری اور دیگر منحوس رسومات کا خاتمہ بھی ہوجائے گا. لیکن ایسا ہو نہیں سکتا. ایسے ہونے نہیں دیا جائے گا. پارلیمانی نظام مقدس ہے. اسلام میں ایک مومن کی حرمت کعبے کی حرمت سے زیادہ ہے لیکن یہاں پارلیمنٹ کی حرمت پر لاکھوں عوام قربان. پارلیمنٹ انکا کعبہ ہے اور پارلیمنٹ کے خلاف بات کی گئی تو ایسا طوفان اٹھایا جائے گا کہ نسلیں یاد رکھیں گی. غریب آدمی کو ذبح کیا جاسکتا ہے لیکن پارلیمنٹ پر ایک لفظ نہیں بولا جاسکتا.

گماں تم کو کہ رستہ کٹ رہا ہے
یقیں مجھ کو کہ منزل کھو رہے ہو

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ