بریکنگ نیوز

چین کا معجزاتی گھاس جنکائو عالمی سطع پر گرین ڈیویلپمنٹ کیلئے اہم پیشرفت

16.jpg

(خصوصی رپورٹ):۔ حال ہی میں چین کی جانب سے متعارف کروایا گیا ایک معجزاتی گھاس جسے مقامی سطع پر جنکائو کہا جاتا ہے قوامِ متحدہ کے اعلی حکام کی جانب سے اس گھاس کو بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام کے حوالے سے زرعی ڈیویلپمینٹ کے فروغ اور عالمی سطع پر اسے ڈیویلپمینٹ تسلسل کے عوامل کو یقینی بنانے کے لیے ایک اہم ترین عنصر کے طور پر بھردیکھا جا رہا ہے، اس حوالے سے اقوامِ متحدہ کے آرگنائزرز اور اعلی عہدہداروں کی جانب سے گزشتہ دنوں رکن ممالک بشمول لائوس، نایجئیریا، مڈگاسکر، فجی، پاپوا نیوگینا، وسطی افریقہ، کے مابین ایک ملاقات میں ان تمام متعلقہ عوامل کا تجزیہ کیا گیا کہ کیسے اس معجزاتی گھاس جنکائو کو عالمی سطع پر گرین معیشت کے فروغ اورپیداواری تسلسل کو برقرار رکھنے کے لیے عملی سطع پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس ضمن میں جنکائو ٹیکنالوجی کے حوالے سے یہ اعلی سطعی اجلاس جسے مشترکہ طور پرچینی گورنمنٹ اور اقوامِ متحدہ کے ڈیپارٹمنٹ برائے اکنامک اینڈ سوشل افیئرز کے اشتراک سے بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام کے حوالے سے ڈیویلپمینٹ تسلسل ایجنڈا برائے 2030کی ویژن کے مطابق گزشتہ ماہ 18اپریل کے اقوامِ متحدہ کے ہیڈ کوارٹرز نیو یارک میں منعقد کیا گیا۔ اس اجلاس کے موقع پر اقوامِ متحدہ میں چین کے مستقل مندوب ماء ژوکسو نے ڈیویلپمنٹ کے بنیادی عوامل پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے کہا کہ بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام مستقبل کے تقاضوں کو مدِنظر رکھتے ہوئے اس پروگرام سے منسلک ممالک کے مابین باہمی روابط، تعاون اور دو طرفہ اشتراک کو یقینی بنانے کے لیے اہم ترین پلیٹ فارم ثابت ہوگا جس سے باہمی اور دو طرفہ ڈیویلپمینٹ یقینی بنائی جا سکے گی۔انہوں نے واضح کیا کہ بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام جہاں عالمی میشت کی گروتھ کو فروغ دے گا وہیں ڈیویلپمنٹ تسلسل کے حوالے سے قائم ایجنڈا برائے 2030پر عمل درامد کے حوالے سے ایک اہم ترین سنگِ میل ثابت ہوگا، اس ضمن میں اقوامِ متحدہ کے 73ویں اجلاس کے صدرماریہ فرنینڈاایسپینوسا گارسس نے چین کی گرین معیشت کے حوالے سے چین کی جنکائو ٹیکنالوجی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ یہ معجزاتی دریافت2030کے حوالے سے قائم ڈیویلپمنٹ تسلسل کی ویژن کے حوالے سے اہم ترین پیش رفت ثابت ہو سکتی ہے۔ اور ڈیویلپمینٹ تسلسل کیساتھ ساتھ اس امر کو دنیا سے انسدادِ غربت، شفاف توانائی، صنفی مساوات، اور ماحولیاتی تغیرات میں توازن برقرار رکھنے کے لیے اہم آلہ کار کے طور پر استعمال کیا جا سکے گا۔ اس حوالے سے اس معجزاتی گھاس جنکائو کو بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام اور ویژن 2030کے حوالے سے اہم ترین پیش رفت قرار دیتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ اس ٹیکنالوجی کی مدد سے فوڈ سیکوریٹی کو ایک طرف تحفظ حاصل ہو گا وہیں گرین معیشت کی جانب ایک مثبت پیش رفت یقینی بنائی جا سکے گی۔ اور زرعی تسلسل، زرعی ملازمتوں کے نئے مواقعے اور عالمی سطع پر ایک ماحول دوست ٹیکنالوجی کو بھی فروغ حاصل ہوگا۔جنکائو ٹیکنالوجی بنیادی طور پر وہ ہربل پودے ہیں جنہیں بنیادی خوراک کا حصہ بنانیوالے مشرومز کی بڑھوتری کے لیے استعمال کیا جاتا ہے اور یہ پودے بیلٹ اینڈ روڈ پروگرام سے منسلک ممالک میں بکثرت ملتے ہیں اور ان علاقوں میں پائی جانیوالی یہ گھاس کسانوں کو درختوں کو کاٹے بغیرغذایئت سے بھر پور مشرومز کو اگانے میں اہم مددگار ثابت ہوتے ہیں اس کے علاوہ ان مشروز اور گھاس کو جانوروں کے چارہ کے طور پر بھی استعمال کیا جاسکتا ہے اور ریتلے علاقوں میں ریتلے ٹیلوں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقلی کے حوالے سے انکا سدِ باب بھی کیا جا سکتا ہے۔ اس طرح سے ایک ہیکٹر رقبے پر اس معجزاتی گھاس کو اگانے سے 30کے قریب نئی ملازمتیں تخلیق ہوتی ہیں اور اس گھاس اور مشرومز کی فارملینڈ پر مناسب دیکھ بھال سے سالانہ 3لاکھ ڈالر تک آمدن بھی کی جا سکتی ہے۔ کیونکہ یہ گھاس بہت کم وقت میں تیزی سے بڑھتی ہے اور جلد کسان کو کٹائی اور فروخت کر کے منافع حاصل ہو سکتا ہے۔ اقوامِ متحدہ کے ہیڈ کورٹرز میں چینی حکام کی جانب سے دی گئی پریزنٹیشن میں چین کے انڈر سیکرٹری جنرل برائیاکنامک اینڈ سوشل افیئرززینمن نے مزید وضاحت کی کہ جنکائو ٹیکنالوجی کی مدد سے دنیا کے ترقی پزیر ممالک کے لاکھوں کسان اپنے مویشیوں کے لیے تیزی سے چارہ اور خوراک کا انتظام کرکے اپنے لیے بہتر وسائل کے مواقع پیدا کر سکتے ہیں جس سے انکے لائیو اسٹاک کی پروڈکشن میں تیزی سے اضافہ ہو سکتا ہے، جس سے نہ صرف ان کے روزگار میں اضافہ ہوگا بلکہ انکے ملک کے لیے غیر ملکی زراِ مبادلہ میں بھئی اضافہ ہوگا کیونکہ انکے ملک کا مشرومز کی برامدات پر خرچ ختم ہو جائیگا۔ اس اجلاس کے موقع پر بعد ازاں اقوامِ متحدہ کے ہیڈ کوارٹرز یں ایک فوٹومائش کا بھی انعقاد کیا گیا جس میں ترقی پزیر ممالک میں اس جنکائو پودے کی تصاویر اور ویڈیوز ماہرین اور اعلی حکام کو دکھائی گیں کہ کیسے جنکائو مقامی سطع پر کسانوں کی زندگیوں میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ اس ضمن میں روانڈا کے دارلحکومت کیگالی کی ایک کمپنی BNپروڈیوسرز کی جانب سے مشرومز پروڈکشن کے حوالے سے ماہانہ دس سے بیس ہزار تھیلے کاشت کیئے جا رہے ہیں جس سے اس فرم کو ماہانہ 3000-5000ڈالر منافع حاصل ہو رہا ہے۔ چاینہ کی فوجیان ایگریکلچرل اینڈ فوریسٹری یونیورسٹی کے پروفیسر گیمیج جنہوں سے جنکائو مشرومز اور گھاس کو اگانے میں کلیدی کردارا دا کیا ہے ان کی سر لنکن فرم ماہانہ کی بنیاد پر بیس ہزار تھیلے کاشت کر ہی ہے، اور انہوں نے امید ظاہر کی ہے کہ انکی فرم اگلے سال2020تک اس کاشت کو ماہانہ 60,000تھیلوں تک بڑھا سکے گی۔ اسی طرح سے لائوس کے ڈپٹی میئر برائے ایگریکلچر اینڈ فوریسٹری بونکوانگ نے کہا ہے کہ جنکائو کی اس نئی ٹیکنالوجی کی مدد سے لائوس کے زرعی شعبے کی استطاعت اور پیداوار میں ماضی کے برعکس کئی گنا اجافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ اور ان عوامل کو دیکھتے ہوئے انکی وزارت کی جانب سے جنکائو ٹیکنالوجی کے حوالے سے ایک کمیشن کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے۔ اس طرح لیسوتھو کے بہت سے زرعی ماہرین جنکائو ٹیکنالوجی کے حوالے سے ٹریننگ چین میں مکمل کر کے اس ٹیکنالوجی کے استعمال پر بھر پو ر محنت کر رہے ہیں تاکہ اس ٹیکنالوجی کی مدد سے اپنے ملک میں زراعت کو بڑھا سکیں لائوس کے وزیرِ زراعت نے کہا کہ انکا ملک جنکائو کے بیج کو گراس پلانٹنگ کے حوالے سے پہلے کی نسبت دس فیصد علاقے پر زیادہ کاشت کر رہا ہے۔۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top

blog lam dep | toc dep | giam can nhanh

|

toc ngan dep 2016 | duong da dep | 999+ kieu vay dep 2016

| toc dep 2016 | du lichdia diem an uong

xem hai

the best premium magento themes

dat ten cho con

áo sơ mi nữ

giảm cân nhanh

kiểu tóc đẹp

đặt tên hay cho con

xu hướng thời trangPhunuso.vn

shop giày nữ

giày lười nữgiày thể thao nữthời trang f5Responsive WordPress Themenha cap 4 nong thonmau biet thu deptoc dephouse beautifulgiay the thao nugiay luoi nutạp chí phụ nữhardware resourcesshop giày lườithời trang nam hàn quốcgiày hàn quốcgiày nam 2015shop giày onlineáo sơ mi hàn quốcshop thời trang nam nữdiễn đàn người tiêu dùngdiễn đàn thời tranggiày thể thao nữ hcmphụ kiện thời trang giá rẻ