بریکنگ نیوز

چین دنیا کیساتھ کشادگی اور باہمی تعاون کے فروغ کےلئے پرعزم

china-economy_wide-59a4aa2a91c279a193c37ca3fdd265ad9811d98f.jpg

خصوصی رپورٹ

“ڈیجیٹل مستقبل اور خدمات پر مبنی ڈیویلپمنٹ کی جانب” کے موضوع کے تحت ، 2021 کا چین بین الاقوامی میلہ برائے تجارت (CIFTIS) 2 ستمبر کو بیجنگ میں شروع ہوا۔

یہ ایونٹ اس حوالے سے بھی بہت اہمیت کا حامل رہا ہے کیونکہ اس پلیٹ فارم کی بدولت بیرونی ممالک ایک مشترکہ انداز میں مارکیٹ کے ممکنہ مواقعوں اور ترقیاتی منافع حاصل کرنے اور عالمی معاشی بحالی میں مزید اعتماد اور استحکام پیدا کرنے کے حوالے سے ایک جدید سروسز ٹریڈ کے فروغ کے لیے اہم پلیٹ فارم ثابت ہوگا۔

سروس سیکٹر میں کشادگی اور باہمی تعاون ترقی کے لیے تیزی سے اہم محرک بن کر ابھر رہا ہے۔ اس ضمن میں چائینہ بین الاقوامی ٹریڈ سروس فیئر چین کی جانب سے پوری دنیا کے ساتھ ترقی کے مواقع ، متعلقہ تجربات، حکمت ، اور وسیع تعاون کو آسان بنانے کے لیے منعقد کی جانے والی تقریب ہے جس سے دنیا بھر کے کاروباری اداروں اور تنظیموں کو ایک متحرک انداز میں تعاون کی یقین دہانی کروائی گئی ہے۔

گذشتہ ستمبر 2020 CIFTIS کے گلوبل ٹریڈ ان سروسز سمٹ میں اپنی تقریر میں ، چینی صدر شی جن پنگ نے تعاون کے لیے ایک کھلے اور جامع ماحول کو فروغ دینے کے لیے مل کر کام کرنے کی تجویز دی ، تعاون کو آگے بڑھانے میں جدت پرازی کے عوامل کو فروغ دینے اور باہمی فوائد اور تعاون کے فروغ کے عزم کا اظہار کیا۔

سروس ٹریڈ کی ترقی کو فروغ دینے اور سروس ٹریڈ کی ترقی کے فوائد کو سب کے لیے قابل رسائی بنانے میں چین کی وسعت اور ذمہ داری کا احساس ایک بہترین امر ہے ۔

سروس ٹریڈ میں دنیا کی سب سے بڑی جامع نمائش کے طور پر ، CIFTIS نے واضح کیا ہے کہ کس طرح باہمی جیت اور تعاون کی طرف عالمی رجحان نے مسلسل رفتار حاصل کی ہے۔ چین نے CIFTIS کا سات مرتبہ انعقاد کیا ، اس طرح سے اس فورم اور پلیٹ فارم کی مدد سے چین نے دنیا کے ممالک سے زیادہ سے زیادہ شرکاء کو اپنی طرف راغب کیا اور انہیں جیت کے تعاون کو آگے بڑھانے کے لیے ایک پلیٹ فارم مہیا کیا۔

رواں سال منعقد ہونے والے CIFTIS فورم میں 153 ممالک اور مختلف خطوں کے 10 ہزار سے زائد کاروباری اداروں کے ساتھ ایونٹ کے لیے رجسٹرڈ ہونے والے غیر ملکی کمپنیوں کی زیادہ شرکت اور زیادہ تعداد ریکارڈ کی گئی ہے۔

اس فورم میں شریک شرکاء کا زبردست جوش و خروش ان کے چین کے روشن معاشی امکانات اور ان کی چین سے وابسطہ اہمیت کو ظاہر کرتا ہے جو وہ چین کے مارکیٹ کے مواقع سے وابستہ ہیں۔ سروس ٹریڈ میں ایک بڑے عالمی کھلاڑی کی حیثیت سے ، چین نے سال کے پہلے نصف حصے کے دوران سروس سیکٹر کی اپنی ویلیو ایڈڈ 29.6 ٹریلین یوآن (4.58 ٹریلین ڈالر) تک بڑھتے ہویے ریکارڈ کیا ہے۔۔

جوز ریکارڈو، سی ای او انٹر نیشنل برانچ آف برازیل گروپ آف کارپوریٹ نے کہا کہ اس پلیٹ فارم کے ذریعے ، دنیا کی کمپنیاں چین کی ترقی کی ایکسپریس ٹرین سے بھر پور فایدہ اٹھا سکتی ہیں ، سروس ٹریڈ میں نئے کاروباری مواقع حاصل کر سکتی ہیں ، اور مل کر عالمی سروس ٹریڈ میں اضافہ کر سکتی ہیں۔

حالیہ برسوں میں ، سائنسی اور تکنیکی انقلاب اور صنعتی تبدیلی کا ایک نیا دور ابھرا ہے ، جس نے ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز کو تقویت دی ہے ، صنعتوں کے گہرائی سے انضمام کو فروغ دیا ہے ، اور خدمت معیشت کی متحرک نمو کو جنم دیا ہے۔

گزشتہ ایک سال کے دوران ، ٹیلی میڈیسن ، آن لائن تعلیم ، شیئرنگ پلیٹ فارم ، باہمی تعاون کا نظام ، اور سرحد پار ای کامرس جیسے شعبوں سے متعلقہ خدمات کوویڈ 19 کے پھیلنے کے دوران بڑے پیمانے پر ابھر کر سامنے آئی ہیں اور ان شعبوں نے کرونا وائرس کے پھیلاؤ کے باوجود بھر پور تقویت حاصل کی ہے

یہ عوامل معیشت کو مستحکم کرنے میں اہم کردار ادا کر رہی ہیں اور ممالک اور بین الاقوامی وبائی تعاون کو فروغ دینے میں مثبت عوامل کے طور پر سامنے آئے ہیں۔

اس سال کی CIFTIS میں پہلی بار ڈیجیٹل سروسز کے لیے ایک خصوصی سیکشن شامل کیا گیا ہے ، جو صارفین کو سروس کی جدت ، خاص طور پر ڈیجیٹل اکانومی کے لیے نئی خدمات فراہم کرنے والی مصنوعات اور ٹیکنالوجیز کے قریب لانے میں کامیاب ہوا ہے۔

رواں سال کی CIFTIS میں پہلی بار صحت کی خدمات پر موضوعاتی نمائش بھی شامل کی گئی ہے۔ وائرس سے نمٹنے میں کی جانے والی سائنسی اور تکنیکی کامیابیوں کو ظاہر کرتے ہوئے ، نمائش سے توقع کی جارہی ہے کہ عالمی وباء کے خلاف جنگ میں عالمی تعاون کو نئی تحریک حاصل ہو سکے گی۔

سی آئی ایف ٹی آئی ایس نے باقی دنیا کے لیے اپنے دروازے کو وسیع کرنے کے لیے چین کے پختہ عزم کا اظہار کا اشارہ کیا ہے۔

اقتصادی عالمگیریت کے اس دور میں ، ممالک معاشی باہمی انحصار اور باہمی مفادات میں شریک ہیں جیسا کہ پہلے کبھی نہیں ہوا ،

چینی صدر شی جن پنگ نے 2020 CIFTIS میں اپنی تقریر میں کہا کہ آج کی دنیا میں ایک دوسرے کے ساتھ خلوص کے ساتھ سلوک کرنا اور مشترکہ فوائد حاصل کرنا ریاست سے ریاستی تعلقات کی کلید ہے.

اور چائنا انٹرنیشنل امپورٹ ایکسپو سمیت پلیٹ فارمز کی تعمیر سے ، چین کا مقصد پالیسی کے تبادلے اور تجربے کے اشتراک کو فروغ دینا ، غیر ملکی حکومتوں ، بین الاقوامی تنظیموں ، کاروباری ایسوسی ایشنوں اور کاروباری اداروں کے ساتھ متنوع شراکت داری کو فروغ دینا ، اور آخر کار عملی تعاون سے زیادہ فوائد یقینی بنانا لوگوں کو فائدہ پہنچانا ہے۔

غیر ملکی حکومتی عہدیداروں اور علماء کا خیال ہے کہ CIFTIS نے چینی اور غیر ملکی کاروباری افراد کو بات چیت کرنے اور باہمی فائدہ مند تعاون کے طریقے تلاش کرنے کی اجازت دی ہے ، پیداوار کے عوامل کے سرحد پار بہاؤ کو فروغ دیا ہے اور دنیا کو چین کے کھلنے کے منافع سے لطف اندوز ہونے میں مدد دی ہے۔چین کی جانب سے مزید کشادگی اور مزید کھلنے کی طرف اقدامات نے دنیا کو وائرس کے خلاف فتح اور معاشی بحالی کی صبح دکھائی ہے۔

یہ خیال کیا جاتا ہے کہ 2021 CIFTIS میں حصہ لینے والے ممالک مسلسل کھلے پن کو برقرار رکھیں گے۔

خدمات میں بڑھتی ہوئی تجارت میں زیادہ سے زیادہ ہم آہنگی پیدا کریں گے اور، نئے طریقے اور تعاون کے مزید شعبے تلاش کریں گئے اور ترقی میں وسیع تر ممکنہ مفادات کو تلاش کریں تاکہ جیت کے تعاون کو “بڑا” بنایا جاسکے اور عالمی معاشی بحالی کو فروغ دیا جاسکے۔ 2021 CIFTIS کے پلیٹ فارم کے ذریعے ترقی
کو یکساں انداز میں سب کے لیے یقینی بنایا جائے گا۔

شیئر کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top